اور ﴿اے محمد﴾ ہم نے آپ کو تمام جہانوں کے لئے رحمت بنا کر بھیجا۔


خشک پہاڑوں میں واقع اس قبرستان میں صرف مقرب لوگوں اور برگزیدہ ہستیوں کی قبریں ہی نہیں تھیں بلکہ یہاں ان گنت معصوم سسکیاں اور لا تعداد آہیں بھی دفن تھیں۔۔
وہ لوگ جہالت کے اندھیروں میں اس قدر ڈوب چکے تھے کہ اس قبیح گناہ کو گناہ سمجھنے سے ہی قاصر تھے۔۔
انہی میں سے ایک شخص اپنا واقعہ سنا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔ کہ۔۔۔
میں اپنی کمسن بیٹی کو لے کر قبرستان جا رہا تھا۔۔
بچی نے میری انگلی پکڑ رکھی تھی اور میرے ساتھ ساتھ چل رہی تھی۔۔
وہ باپ کے لمس سے خوش تھی اور سارا راستہ اپنی توتلی زبان میں میرے ساتھ باتیں کرتی رہی ۔۔۔۔ وہ مجھ سے فرمائشیں بھی کرتی رہی اور میں سارا راستہ اسے اور اس کی فرمائشوں کو بہلاتا رہا۔۔
میں اسے لے کر قبرستان پہنچا اور اس کے لئے قبر کی جگہ منتخب کی ۔۔۔۔ میں نیچے زمین پر بیٹھا اور اپنے ہاتھوں سے ریت اٹھانے لگا۔۔۔۔ میری بیٹی نے مجھے کام کرتے دیکھا تو وہ بھی اپنے کام میں لگ گئی اور اپنے ننھے ننھے ہاتھوں سے میرے ساتھ مٹی کھودنے لگی ۔۔۔۔ ہم دونوں باپ بیٹی ریت کھودتے رہے۔۔۔۔
میں نے اس دن صاف کپڑے پہن رکھے تھے۔۔۔۔ ریت کھودنے کے دوران میرے کپڑوں پر مٹی لگ گئی ۔۔ میری بیٹی نے میرے کپڑوں پر مٹی دیکھی تو اس نے اپنے ہاتھ جھاڑے ۔۔۔۔ اپنے ہاتھ اپنے کپڑوں کے ساتھ پونچھے اور میری قمیض سے مٹی جھاڑنے لگی۔۔
میں اس کی قبر کھود رہا تھا اور وہ میرے کپڑوں سے ریت جھاڑ رہی تھی۔۔
قبر تیار ہوئی تو میں نے اسے قبر میں بٹھایا اور اس پر مٹی ڈالنا شروع کر دی۔۔۔۔ وہ بھی کھیل سمجھ کر اپنے ننھے ہاتھوں سے اپنے اوپر مٹی ڈالنے لگی۔۔
وہ مٹی ڈالتی جاتی تھی ۔۔۔۔ قہقہ لگاتی جاتی اور مجھ سے فرمائشیں کرتی جاتی ۔۔۔۔ لیکن میں دل ہی دل میں اپنے جھوٹے خداوں سے دعا کر رہا تھا کہ تم میری بیٹی کی قربانی قبول کر لو اور اگلے سال مجھے بیٹا دے دو۔۔
میں دعا کرتا رہا اور بیٹی ریت میں دفن ہوتی رہی۔۔
آخر میں جب وہ گردن تک دفن ہو گئی اور میں نے اس کے سر پہ مٹی ڈالنا شروع کی تو اس نے خوفزدہ نظروں سے میری طرف دیکھا اور اپنی توتلی زبان میں بولی “بابا مجھے کیوں دفن کر رہے ہیں”
میں نے اپنے دل کو پتھر بنا لیا اور دونوں ہاتھوں سے قبر پر مٹی پھینکنے لگا۔۔
میری بیٹی روتی رہی ۔۔۔ چیختی رہی ۔۔۔ بابا بابا پکار کر دہائیاں دیتی رہی لیکن میں نے اس معصوم کو زندہ دفن کر دیا۔۔۔
یہ وہ نقطہ تھا جہاں رحمت اللعالمین صلی اللہ علیہ وسلم کا ضبط جواب دے گیا ۔۔۔ ہچکیاں بندھ گئیں ۔۔۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی داڑھی مبارک آنسووں سے تر ہو گئی اور آواز حلق مبارک میں پھنسنے لگی۔۔
وہ شخص دھاڑیں مار مار کر رو رہا تھا اور رحمت عالم صلی اللہ علیہ وسلم ہچکیاں لے رہے تھے۔۔- وہ شخص پوچھ رہا تھا “یا رسول اللہ  کیا میرا یہ گناہ بھی معاف ہو جائے گا” اور اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی آنکھیں کہ اشکوں کی نہریں بہہ رہی تھیں۔۔۔۔۔!
جنت معلٰی کے اس قبرستان کے پاس سے گزرتے ہوئے میری آنکھوں میں آنسووں کی دھندلاہٹ تھی ۔۔ مجھے اس بچی اور اس جیسی ہزاروں معصوم بچیوں کی آہیں سنائی دے ہی تھیں۔۔۔۔ اور میں سوچ رہا تھا کہ کیا ہم پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا اتنا احسان کافی نہیں ہے۔۔۔۔ کیا یہ کافی نہیں ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں اس گناہ سے بچا لیا ۔۔۔۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نہ آتے تو ہم میں سے نجانے کون کون آج بھی اس گناہ میں شریک ہو رہا ہوتا۔۔۔۔ ہم میں سے کون کون اپنی ہی بچیوں کا قاتل ہوتا۔۔۔
کیا رحمتِ عالم صلی اللہ علیہ وسلم کے آنے کی یہی رحمت کافی نہیں ہے کہ یہ قبیح گناہ ہمیشہ ہمیشہ کے لئے دنیا سے ختم ہو گیا۔۔۔۔۔۔۔
﴿اقتباس﴾

وَ مَاۤ اَرۡسَلۡنٰکَ اِلَّا رَحۡمَۃً لِّلۡعٰلَمِیۡنَ ﴿الانبیاء:107﴾
اور ﴿اے محمد﴾ ہم نے آپ کو تمام جہانوں کے لئے رحمت بنا کر بھیجا

MERI TEHREER K AANSU


mujy teri judai ne
yahi meraj bakhshi hy
k main jo lafz likhta hoon
wo saary lafz roty hain
k main jo harf bun’ta hoon
…wo saary bain karty hain
mery sang is judai main
mery alfaz marty hain
sabhi tareef karty hain
meri tehreer ki lekan
kabhi koi nahi sunta
maery alfaaz ki siski
falak b jo hila daaly
mery lafzon main hy shamil
usi taseer k aansu
kabhi dekho mery hamdam
MERI TEHREER K AANSU

Tum Mujhe Na Bhulane Ka Waada Karo


Khusbu’on Ki Tarha Meri Har Saans Mein
Pyar Apna Basane Ka Waada Karo
Rang Jitne Tumhari Mohabbat Ke Hain
Mere Dil Mein Sajane Ka Waada Karo

Hai Tumhari Wafaon Pe Mujhko Yaqeen
Phir Bhi Dil Chata Hai Mere Dil Nasheen
Yunhi Meri Tasalli Ki Khatir Zara
Mujhko Apna Banane Ka Waada Karo

Jab Mohabbat Ka Iqrar Karte Ho Tum
Dharkano Mein Naya Rang Bharte Ho Tum
Barra Kar Chuke Ho Magar Aaj Phir
Mujhko Apna Banane Ka Waada Karo

Sirf Lafzon Se Iqraar Hota Nahin
Ik Janib Se Hi Pyar Hota Nahin
Mai Tumhe Yaad Rakhne Ki Khaun Kasam
Tum Mujhe Na Bhulane Ka Waada Karo.

Baat nikalegee to phir duur talak jaayegee


Baat nikalegee to phir duur talak jaayegee

Log bewajah udaasee kaa sabab poochhenge

Ye bhee poochhenge ke tum itnee pareshaan kyoon ho

Oongliyaan uthengee sookhe huye baalon kee taraf

Ek nazar dekhenge guzre huye saalon kee taraf

Choodiyon par bhee kai tanz kiye jaayenge

Kaanpate haathon pe bhee fikre kase jaayenge

Log zaalim hain har ek baat kaa taanaa denge

Baaton baaton mein meraa zikr bhee le aayenge

Unakee baaton kaa zaraa saa bhee asar mat lenaa

Warnaa chehre ke taasur se samajh jaayenge

Chaahe kuchh bhi ho sawaalaat naa karnaa unse

Mere baare mein koi baat na karnaa unse

Baat nikalegii to phir door talak jaayegee

MoHaBBat Ko Samajh Jao


Wafa Ki Aarzoo Karna
Safar Ki Justujoo Karna

Jo TUM Mayoos Ho Jao
To MUjH Se Guftugoo Karna

Ye Aksar Ho Bhi Jaata Hy
K Koi Kho Bhi Jata Hy

Muqaddar Ko SataogE
To Phir Ye So Bhi jata Hy

Agar TUM Hosla Rakho
Wafa Ka Silsila Rakho

Jo TUM Ko Apna Kehta Ho
To Us Se Raabta Rakho

MAiN Ye Daavy Se kehta Hon
Kabhi Naakaam Na HogE

MoHaBBat Ko Samajh Ja0
Kabhi Badnaam Na HogE.. .